26-10-2017

اسلام آباد میں احتساب عدالت نے جمعرات کو سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کے دو ریفرنسوں میں قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر دیے ہیں جبکہ تیسرے ریفرنس میں ان کے ضمانتی کو نوٹس جاری کر دیا گیا ہے۔

احتساب عدالت نے نوازشریف کے وکیل کو کہا کہ ملزم کو پیش ہونے کا آخری موقع دیتے ہیں، اگر وہ پیش نہ ہوئے تو ان کے نا قانل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کریں گے۔

احتساب عدالت نے جن دو ریفرنسوں میں ملزم کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے ان میں العزیزیہ سٹیل مل اور آف شور کمپنیاں شامل ہیں جبکہ ایون فیلڈ پراپرٹیز ریفرنس میں اُن کے ضمانتی کو نوٹس جاری کیا ہے۔ایون فیلڈ ریفرنس میں وزیر مملکت طارق فضل چوہدری نے نواز شریف کے ضمانتی مچلکے عدالت میں جمع کروائے تھے۔

 ریفرنس کی سماعت کے دوران نواز شریف کے وکیل نے  نواز شریف کی حاضری سے 7 دن کیلئےاستثنیٰ کی درخواست دی تھی جس میں موقف اپنایا گیا کہ کلثوم نواز علیل ہیں اس لئے نوازشریف پیش نہیں ہوسکتے۔ جس پر نیب پراسیکیوٹر نے مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ ملزم  نوازشریف جان بوجھ کر عدالت میں پیش نہیں ہو رہے لہذا ان کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے جائیں۔

 عدالت نے نوازشریف کو ضمانتی مچلکوں کے ساتھ 3 نومبر کو پیش ہونے کا حکم دے دیا۔