02-06-2018

پشاور ہائی کورٹ سرکٹ بنچ ڈیرہ  کے جسٹس اعجاز انور اور جسٹس شکیل احمد پر مشتمل دورکنی بنچ نے این ٹی ایس کے ذریعے سی ٹی پوسٹ پر بھرتی ہونے والے امیدوار کی رٹ پٹیشن منظور کرتے ہوئے اسے عمر کی رعایت دیتے ہوئے اسے اپنی پوسٹ پر بحال کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں ۔

دائر رٹ پٹیشن کے مطابق درخواست گزار نے سال 2014 میں این ٹی ایس کے ذریعے سی ٹی پوسٹ پر کوالیفائی کیا اور میرٹ پر پورا اترا لیکن ان سے کم نمبر والے امیدواروں کو پوسٹ پر تعینات کیاگیا کیونکہ اس کی عمر 35 سال سے زائد تھی ۔عدالت کو بتایا گیا کہ صوبہ میں سال 2007 تک سرکاری ملازمتوں پر پابندی تھی جبکہ  رولز کے تحت ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کو دوسال جبکہ ڈائریکٹر ایجوکیشن کو پانچ سال اور وزیر اعلی کو دس سال سے زائد عمر کو ختم کرنے کا اختیار حاصل ہے لیکن اس کے باعث اسے نوکری سے محروم کردیاگیا ۔اس وقت اس کی عمر چالیس سال ہے اور وہ این ٹی ایس کے لئے بھی دوبارہ اہل نہیں ہے ۔