12-06-2017

پشاورہائی کورٹ نے خیبر پختونخوا میں حال ہی میں بھرتی ہونے والے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججوں کے خلاف دائر رٹ درخواستیں یکجا کرتے ہوئے سماعت اکیس جون تک ملتوی کردی ہے ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی کی سربراہی میں قائم دو رکنی بنچ نے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں موقف اپنایا گیا کہ پشاورہائی کورٹ نے حال ہی میں تئیس ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججوں کی تقرری کی ہے تاہم اخبار میں ججوں کی بھرتی کےلئے جو اشتہار دیا گیا تھا بھرتیاں اس کے طریقہ کار کے منافی کی گئی ہیں ، فیل امیدوراوں کو بھی بھرتی کیا گیا ہے لہذا فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ ان بھریتوں کو کالعدم قرار دے کر ان ججوں کو کام سے روکا جائے ۔چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ ججوں کی پہلے ہی کمی ہے انہیں کام سے نہیں روکا جا سکتا جبکہ وہ خود ایڈمنسٹریٹو کمیٹی میں تھے اس بناء پر رٹ کی سماعت نہیں کر سکتے ۔ فاضل چیف جسٹس نے رٹ درخواستیں ایسے بنچ کو لگانے کی ہدایت کی جو ایڈمنسٹریٹو کمیٹی کے رکن نہ ہوں ۔