22-11-2017

پشاور ہائی کورٹ نے چیئرمین نادرا کے احکامات کو کالعدم قرار دیتے ہوئے جعلی شناختی کارڈ بنانے کے الزام میں برطرف کئے گئے بڈھ بیر نادرا سنٹر کے انچارج ڈائریکٹر ذکریا خان کو بحال کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں۔

جسٹس قیصر رشید اورجسٹس محمد غضنفر خان پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں موقف اپنایا گیا کہ چیئرمین نادرا نے درخواست گزار کو جعلی شناختی کارڈ بنانے کے الزام میں انہیں نوکری سے برطرف کیا ہے جو کہ غیر قانونی اور غیر آئینی اقدام ہے کیونکہ درخواست گزار کے خلاف عائد الزامات بے بنیاد ہیں اور ان کی برطرفی غیر قانونی طریقے سے کی گئی ہے ۔

عدالت نے دلائل کے بعد درخواست گزار کو بحال کر دیا اور چیئرمین نادرا کے احکاامت کالعدم قرار دے دیئے۔