04-08-2017

انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے تخریب کاری کی غرض سے بارودی مواد رکھنے اور غیر قانونی طور پر پاکستان میں قیام کرنے کے الزام میں گرفتار افغان باشندے کے خلاف جرم ثابت ہونے پر اسے مجموعی طور پر انتیس سال قید اور دس ہزار روپے جرمانہ کی سزا سنا دی ہے ۔

عدالتی فیصلہ کے مطابق جرمانہ ادا نہ کرنے کی صورت میں اسے مزید ایک ماہ قید میں رکھنے اور سزا ختم ہونے کے بعد ملک بدر کرنے کا حکم بھی دیا اور اس کی پاکستان میں موجود اثاثوں کو بحق سرکار ضبط کرنے اور تین سو بیاسی بی کا فائدہ دیتے ہوئے دوران ٹرائل حراست کو سزا میں شمار کرنے کے احکامات بھی جاری کر دیئے ہیں ۔استعاثہ کے مطابق ملزم مجیب الرحمان عرف مظہرے پر الزام ہے کہ وہ مفرور ملزم عزیز الرحمان اور دیگر ملزمان کے ہمراہ پشاور میں تخریب کاری کی غرض سے بھاری مقدار میں بارودی مواد لاا تھا جس کو تھانہ سی ٹی ڈی کے اہلکارّں نے یکم مئی دو ہزار پندرہ کو گرفتار کیا اور اس کے خلاف سیون اے ٹی اے ، پانچ ایکسپلوسیو اور چودہ فارن ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ۔