14-03-2017

اسلام آباد ہائی کور ٹ کے دو رکنی بنچ نے سابق صدر پرویز مشرف کی جانب سے ججز نظر بندی کیس میں دہشت گردی کی دفعات ختم کرنے کے حوالے سے دائر درخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا ہے ۔

جسٹس اطہر من اللہ اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل اسلام آباد ہائی کورٹ کے دو رکنی بنچ نے دائر درخواست کی سماعت کی جس میں سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ ججز نظر بندی کیس تعزیرات پاکستان کے مختلف دفعات کے تحت درج کیا گیا تاہم عدالت عالیہ کے سنگل بنچ نے سابق صدر پرویز مشرف کی ضمانت قبل از گرفتاری  کی درخواست مسترد کرتے ہوئے انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعات بھی شامل کرنے کا حکم دے دیا تاہم استعاثہ دہشت گردی کے حوالے سے کوئی ثبوت پیش نہیں کر سکا لہذا فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ مقدمہ سے دہشت گردی کی دفعات ختم کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں ۔