13-04-2017

ڈائریکٹر جنرل خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور  محمد مسعود خان نےکہا ہے کہ جوڈیشل اکیڈمی پشاور نے دو ہزار بارہ سے دو ہزار سولہ کے درمیانی عرصہ میں جوڈیشل افسران اور نظام انصاف سے منسلک تمام سٹیک ہولڈرز کے مختلف ایک سوبتیس ٹریننگز، سیمینارز اور ورک شاپس کے ذریعے تین ہزار پانچ سو ستاسی شرکاء کو ٹریننگ فراہم کی ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس کی ایک ماہ پر محیط پروبیشن سروس ٹریننگ مکمل ہونے کے موقع پر منعقدہ اختتامی تقریب سے اپنے خطاب میں کیا ۔ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی نے پروبیشن سروس ٹریننگ مکمل کرنے پرسول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس کو مبارک باد دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ ایک ماہ پر محیط اس پروبیشن سروس ٹریننگ  سے نہ صرف شرکاء کے پیشہ وارانہ صلاحیتوں میں اضافہ ہوا ہو گا بلکہ اس سے لوگوں کو فوری اور سستے انصاف کی فراہمی میں بھی مددملے گی ۔

ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی نے کہا کہ چیئرمین خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور  ، چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ  جسٹس یحیی آفریدی کی خصوصی ہدایات کی روشنی میں نئے بھرتی ہونے والے ایک سو تین سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس کےلئے پروبیشن سروس ٹریننگ کے سلسلے میں تاریخ میں پہلی مرتبہ خصوصی کورس مرتب کیا گیا جس کے تحت ان ججز کو تربیت گئی ۔

  ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی نے کہا کہ چیئرمین خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی ، چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی کی خصوصی ہدایات کی روشنی میں جوڈیشل اکیڈمی مختلف کورسز ڈیزائن کر رہی ہے جن کے تحت صوبہ کے مختلف اضلاع میں تعینات جوڈیشل افسران سمیت نظام انصاف سے منسلک دیگر سٹیک ہولڈرز کےلئے تربیتی پروگرامز منعقد کئے جائیں گے۔