13-03-2017

خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور میں پروبیشن سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس/علاقہ قاضیوں کے تیسرے بیچ کے لئے ایک ماہ پر محیط پروبیشن سروس  ٹریننگ پروگرام کا آغاز آج سے ہو گیا ہے۔

تربیتی پروگرام کے تیسرے بیچ میں صوبہ کے مختلف اضلاع میں تعینات تینتیس پروبیشن سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس /علاقہ قاضی شریک ہیں ۔

تربیتی پروگرام کی افتتاحی تقریب جوڈیشل اکیڈمی پشاور میں منعقد ہوئی جس میں ڈائریکٹر جنرل جوڈیشل اکیڈمی  محمد مسعود خان ، ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن جوڈیشل اکیڈمی  محمد آصف خان ، ڈائریکٹر ز انسٹرکشز  ڈاکٹر قاضی عطاء اللہ ، حافظ نسیم اکبر اور ڈین فیکلٹی جوڈیشل اکیڈمی خواجہ وجہہ الدین نےشرکت کی ۔اپنے خطاب میں ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی محمد مسعود خان نے شرکاء کو جوڈیشل اکیڈمی آمد پر خوش آمدید کہتے ہوئے انہیں نظام انصاف کے قابل فخر شعبے  کےلئے انتخاب پر مبارک باد دیتے ہوئے کہا کہ خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور  میں جوڈیشل افسران اور نظام انصاف سے منسلک تمام سٹیک ہولڈرز کو ٹریننگ فراہم کر رہی ہے اور اس سلسلہ میں

پروبیشن سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس کے دو بیچز کی چار، چار ہفتوں پر محیط پروبیشن سروس ٹریننگ مکمل کی گئی ہے ۔ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی کا کہنا تھا کہ سول ججز  ضلعی عدلیہ کا مرکز کا کردار ادا کرتی ہے  ان کی  پروفیشنل اہلیت اور صلاحیت ہونی چاہیے اور ان کی  اس ٹریننگ کے مقاصد میں ان کی اہلیت اور موثر فریم ورک  شامل ہیں تاکہ عدالتی نظام کے صلاحیت  اور ترسیل کے نظام کو بہتر بنایا جا سکے ۔ بعد میں ڈین فیکلٹی خواجہ وجہہ الدین اور سینئر ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن محمد آصف خان نے ٹریننگ پروگرام کی اورین ٹیشن کلاس لی جس میں انہیں تربیتی پروگرام کے اغراض و مقاصد اور دیگر امور سے متعلق شرکاء کو آگاہ کیا۔

 آج بنچ تھری ٹریننگ پروگرام کے پہلے دن خیبر پختونخوا احتساب کمیشن کی خصوصی عدالت کے جج  حیات علی شاہ نے ٹیم ورک اینڈ کرائسیز منجمنٹ کے موضوع پر لیکچر دیا جبکہ ڈائریکٹر جنرل خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور محمد مسعود خان نے پریکٹیکل ایمپلی مینٹیشن آف پرنسپلز آف جیورسپروڈینس ان ٹرائلز کے موضوع پر جبکہ ریسورس پرسن ڈاکٹر جاوید اقبال نے فنڈیمنٹلز آف ڈیسیژن میکینگ کے موضوع پر لیکچرز دیئے ۔