10-08-2017

پشاور ہائی کورٹ نے دھماکہ خیز مواد اور غیر قانونی رہائش رکھنے کے الزام میں گرفتار افغان باشندہ کی انتیس سال قید کی سزا کے فیصلے کو معطل کرتے ہوئے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کو مقدمے کی ازسر نو سماعت کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں۔

جسٹس اکرام اللہ اور جسٹس اشیتاق ابراہیم پر مشتمل دو رکنی بنچ نے افغان باشندے ملزم عبید اللہ کی جانب سے دائر اپیل کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ بیس مارچ دو ہزار سولہ کو سی ٹی ڈی نے خزانہ شوگر ملز کے قریب ملزم کو گرفتار کرکے ان پر غیر قانونی رہائش اور بارودی مواد رکھنے کا مقدمہ درج کیا گیا لہذا فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ ان کو ملنے والی سزا کو کالعدم قرا ر دیا جائے ۔