12-04-2018

خیبر پختونخوا حکومت نےدیوانی مقدمات کو ایک سال میں نمٹانے کیلئے خیبر پختونخوا سول کورٹس ترمیمی ایکٹ 2017کی منظوری دے دی ہے ۔

صوبائی حکومت کی کابینہ اجلاس میں خیبر پختونخوا حکومت نے چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی جانب سے صوبوں میں سستا اور فوری انصاف کی فراہم کیلئے قانون سازی اور اشتہارات میں حکومتی عہدیداروں کی تصاویر پر پابندی کے بیان کا خیر مقدم کیا ہے ۔ صوبائی حکام کے مطابق صوبائی کابینہ نے دیوانی مقدمات کو ایک سال میں نمٹانے کیلئے خیبر پختونخوا سول کورٹس ترمیمی ایکٹ 2017کی منظوری دے دی۔

کابینہ نے سکولوں میں بچوں کو جسمانی سزا دینے کی روک تھام کیلئے مسودہ قانون 2018کی منظوری بھی دے دی۔ ایکٹ کا اطلاق صوبے کی تمام سرکاری اورنجی سکولوں پر ہوگاجبکہ خلاف ورزی پر چھ ماہ قید یا پچاس ہزار تک جرمانہ یا دونوں لاگو ہوں گے۔
اسی طرح خیبر پختونخوا کابینہ نے موٹر وہیکلز رولز 1969میں ترمیم کی منظوری  بھی دی ۔ ترمیم کے تحت ہیوی ٹرانسپورٹ ، لائٹ ٹرانسپورٹ ، لائٹ ٹرانسپورٹ اور پبلک سروس گاڑیوں کمرشل مقاصد کیلئے زیر استعمال گاڑیوں کے لائسنس اجراء کیلئے ڈائریکٹر ٹرانسپورٹ مجاز اتھارٹی ہوگا۔