11-10-2017

پشاور ہائی کورٹ نے رکن قومی اسمبلی محمود خان اچکزئی کی جانب سے خیبر پختونخوا کو افغانستان کا حصہ قرار دینے سے متعلق بیان پر ان کے خلاف غداری کا مقدمہ چلانے اور قومی اسمبلی کی نشست سے نااہلی کے لئے دائر رٹ درخواست کی سماعت ملتوی کرتے ہوئے متعلقہ فریقین سے جواب طلب کرلیا ہے  جسٹس قیصر رشید اور جسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں موقف اپنایا گیا کہ محمود خان اچکزئی نے آٹھ ماہ قبل ایک بیان میں خیبر پختونخوا کو افغانستان کا حصہ قرار دیا تھا حالانکہ یہ بیان آئین پاکستان سے متصادم اور ان کے اپنے حلف کے منافی ہے لہذا وہ کسی بھی صورت میں رکن قومی اسمبلی برقرار نہیں رہ سکتے لہذا ان کی اسمبلی رکنیت سے نااہل قرار دیا جائے اور ان کے خلاف آئین کے آرٹیکل چھ کا مقدمہ بھی درج کیا جائے ۔