24-02-2017

پشاور ہائی کورٹ میں ریلوے پولیس کی تنخواہوں اور مراعات میں اضافے کےلئے رٹ پٹیشن دائر کر دی گئی ہے ۔

دائر رٹ درخواست میں ریلویز پولیس کی تنخواہیں موٹروے اور دیگر صوبوں کی پولیس کے برابر لانے کی استدعا کی گئی ہے اور موقف اختیار کیا گیا ہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے دو ہزار بارہ میں ریلوے پولیس کی تنخواہیں صوبائی پولیس کے برابر کرنے کے احکامات جاری کئے گَ تاہم پانچ سال گزرنے کے باوجود اس فیصلے پر عمل درآمد نہیں ہوسکا جبکہ اس حوالےسے ایک سمری فنانس ڈویژن کو بھجوائی گئی تھی جو کافی عرصہ رکھنے کے بعد فنانس ڈویژن نے وزیر اعظم آفس بھجوادی اور یہ سمری طویل عرصے سے وزیراعظم کے پاس منظوری کےلئے پڑی ہوئی ہے ۔ رٹ میں موقف اپنایا گیا کہ ریلوے پولیس کا سیلری پیکج  صوبوں ، وفاق اور موٹروے پولیس  کے سیلری پیکج سے نصف سے بھی کم ہے جبکہ ریلوے پولیس میں اس وقت ساڑھے آٹھ ہزار ملازمین ہیں تاہم کم تنخواہوں کے باعث ریلوے پولیس احساسی محرومی کا شکار ہے اور اخراجات پورے نہ ہونے کی بناء پر اہلکار قبل از وقت ریٹائرمنٹ لے رہے ہیں لہذا فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ رٹ پٹیشن منظور کرکے ریلوے پولیس کی تنخواہیں دیگر صوبائی پولیس کے برابر لائی جائیں ۔