09-02-2017

پشاور ہائی کورٹ نے سول ججوں کے امتحان میں انٹرویو کے طریقہ کار کے خلاف دائر رٹ پر چیئرمین پبلک سروس کمیشن خیبر پختونخوا کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کر لیا ہے ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اورجسٹس یونس تہیم پر مشتمل دو رکنی بنچ نے چودہ امیدواروں کی جانب سے دائر رٹ پٹیشن کی سماعت کی ۔

عدالت کو بتایا گیا کہ درخواست گزاروں نے پبلک سروس کمیشن کے تحت سول ججوں کی پوسٹوں کےلئے تحریری امتحان پاس کیا اور انٹرویو کےلئے انہیں طلب کیا گیا تاہم جب نتائج آئے تو انہیں فیل قرار دیا گیا اس طرح جو طریقہ کار انٹرویو کے نمبروں کےلئے دیا گیا تھا اس پر عمل ہی نہیں ہوا کیوںکہ قانون کے تحت ہر ممبر کے پاس اپنے اپنے نمبر ہوتے ہیں جس پر وہ اپنی مرضی سے امیدوار کو نمبر دیتے ہیں لیکن اس دفعہ چیئرمین نے تمام نمبروں کو یکجا کرکے امیدواروں کو کامیاب یا ناکام قرار دیا ہے جو کہ غیر قانونی ہے ۔

عدالت نے دائر رٹ پٹیشن پر ابتدائی دلائل کے بعد چیئرمین پبلک سروس کمیشن خیبر پختونخوا سے جواب طلب کر لیا۔