25-04-2017

سپریم کورٹ نے حکومت سے ڈومیسٹک چائلڈ لیبر  یعنی کم سن بچوں سے لی جانے والی مشقت کے خاتمے کا مجوزہ بل طلب کرلیا ہے۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں  ثاقب نثار کی سر براہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے طیبہ تشدد کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے کہ بچوں سے جبری مشقت کروانا معاشرتی ناسور ہے اور حکومت ڈومیسٹک چائلڈ لیبر کے خاتمے کا مجوزہ بل پیش کرے۔

 ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد  نے عدالت کو بتایا کہ طیبہ تشدد کیس کا چالان ماتحت عدالت میں پیش کر دیا گیا ہے، کیس ہائی کورٹ میں ہے اور وہیں اس کی سماعت ہوگی۔جبکہ  ملزمان کو 27 اپریل کے لیے طلبی کے نوٹس جاری کیے جاچکے ہیں۔

چیف  جسٹس  پاکستان نے دوران سماعت حکومتی وکیل سے ڈومیسٹک ورکرز ایمپلائمنٹ بل 2013 کے حوالے سے بھی استفسار کیا جس کے بعد کیس کی آئندہ سماعت اگلے ہفتے تک کے لیے ملتوی کردی ۔