27-04-2018

پشاور ہائی کورٹ نے ڈیرہ اسماعیل خان کی رہائشی خاتون شریفاں بی بی کیس میں پولیس سے چودہ دنوں میں پراگرس رپورٹ طلب کرلیا ہے ۔

پشاور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس یحییٰ افریدی اور جسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے شریفاں بی بی کیس کی سماعت کی۔ عدالت کو بتایا گیا کہ  پولیس کو تاحال ملزم سجاول کی تلاش ہے اور اسے گرفتار نہیں کیا گیا ہے ۔عدالت میں ڈی ایس پی کولاچی خالد عثمان نے بتایا کہ سجاول کی گرفتاری کے لیے کوششیں جاری ہیں، جبکہ ملزم کی ا129کنال اور بارہ مرلے زمین قرق کردی گئی ہے۔ ملزم کے تمام اکائونٹس بند کئے ہیں ، شناختی کارد بلاک اور پنشن بھی روک دی گئی ہے جبکہ ان کا نام ایگزیٹ کنٹرول لسٹ میں بھی ڈال دیا گیا ہے ۔شریفاں بی بی کے وکیل نے عدالت کو استدعا کی کہ جس نے شریفاں بی بی کی ویڈیو بنائی تھی ان کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ دائر کیا جائے۔ عدالت نے مقدمے کی سماعت پندرہ مئی تک ملتوی کردی ہے۔