14-02-2017

پشاور ہائی کورٹ نے جیل سے رہائی پانے والے شہری کو جیل کے احاطہ سے دوبارہ حراست میں لینے پر آئی جی پی خیبر پختونخوا، ڈی آئی جی مردان اور متعلقہ تھانہ کے ایس ایچ او  کونوٹس جاری کرکے جواب طلب کر لیاہے ۔

جسٹس مسرت ہلالی اور جسٹس لعل جان خٹک پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر حبس بے جاء درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایاگیا کہ سجاد عرف  فرمان نامی شہری  فوجداری مقدمے میں جیل میں تھا اور جوڈیشل مجسٹریٹ کی جانب سے اس کی رہائی کے احکامات جاری ہوئے جس پر اسے چھ فروری کو  جیل سے رہا کر دیا گیا تاہم  رہائی کے موقع پر  متعلقہ تھانہ کے ایس ایچ او نعیم خان نے سجاد کے والد اور چچا زاد بھائیوں کے سامنے حراست میں لیا اور تاحال اس کا کوئی اتہ پتہ نہیں ہے لہذا اسے کے بازیابی کے احکامات جاری کئے جائیں ۔

عدالت نے ابتدائی دلائل کے بعد پولیس حکام اور ایس ایچ او نعیم خان کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کرلیا۔