30-06-2017

پشاور ہائی کورٹ نے خیبر پختونخوا حکومت کو صوبائی احتساب کمیشن کے اہلکاروں کی ممکنہ برطرفی روکتے ہوئے جواب طلب کرلیاہے ۔

جسٹس روح الاآمین خان اور جسٹس لعل جان خٹک پر مشتمل دو رکنی بنچ نے صوبائی احتساب کمیشن کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن سمیت سترہ اہلکاروں کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کوبتایا گیا کہ درخواست گزار دو ہزار چودہ میں خیبر پختونخوا احتساب کمیشن میں بھرتی ہوئے اور یہ بھرتی دو ہزار چودہ کے احتساب کمیشن رولز کے تحت ہوئی تاہم صوبائی حکومت نے دو ہزار سولہ میں نئے رولز مرتب کئے جس کا مقصد من پسند افراد کی بھرتی اور درخواست گزاروں کو ملازمت سے برطرف کرنا ہے جبکہ درخواست گزار بہ احسن طریقے سے فرائض انجام دے رہے ہیں اور ان کی بھرتی جن رولز کے تحت ہوئی ہے وہ اسی کے تحت فرائض انجام دیں گے لہذا درخواست گزاروں کے خلاف ممکنہ کاروائی روکی جائے ۔فاضل عدالت نے صوبائی احتساب کمیشن کو درخواست گزاروں کے خلاف ممکنہ کاروائی سے روک دیا اور صوبائی حکومت سے اس ضمن میں نوٹس جاری کرکے جواب طلب کرلیا۔