25-07-2017

پشاور ہائی کورٹ نے صوبے کے تمام بورڈز کو نجی سکولوں کو ہراساں نہ کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں اور جماعت پنجم اور ہشتم کے امتحانات بورڈ کے ذریعے کرانے کے خلاف دائررٹ پر جواب طلب کر لیا ہے ۔

جسٹس لعل جان خٹک اورجسٹس عبد الشکور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے پرائیویٹ ایجوکیشن نیٹ ورک کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ صوبائی حکومت نے جماعت پنجم اور جماعت ہشتم کے لئے بورڈز کے امتحانات کی منظوری دی ہے کہ دو ہزار سترہ ، اٹھارہ کے تعلیمی سیشن کے امتحانات بورڈ کے ذریعے ہوں گے تاہم صوبائی حکومت نے اس حوالے سے تاحال کوئی قانون سازی نہیں کی ہے جبکہ اس فیصلے میں نجی تعلیمی اداروں کو اعتماد میں نہیں لیا گیا ہے لہذا اس فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے ۔

دوران سماعت پشاورتعلیمی بورڈ کے وکیل نے موقف اپنایا کہ اس حوالے سے صرف پشاورتعلیمی بورڈ نہیں بلکہ صوبے کے آٹھ تعلیمی بورڈز ہیں لہذا انہیں جواب داخل کرنے کےلئے مہلت دی جائے ۔