02-06-2017

پشاور ہائی کور ٹ نے لوکل گورنمنٹ کمیشن خیبر پختونخوا کی جانب سے کرک کے ترقیاتی فنڈز روکنے کے احکامات کالعدم قرار دیتے ہوئے قرار دیا ہے کہ لوکل گورنمنٹ کمیشن کی جانب سے مرتب کردہ سفارشات چوبیس گھنٹوں کے انر وزیر اعلی خیبر پختنوخوا کو پیش کئے جائیں جس پر وہ سات یوم کے اندر فیصلہ دیں ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اورجسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے ضلع ناظم کرک اور ضلع کونسل کے رکن کی جانب سے دائر ر ٹ درخواستوں کی سماعت کی جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ لوکل گورنمنٹ کمیشن نے ضلع کونسل کرک کے قائد حزب اختلاف کی درخواست پر ضلع کونسل کرک کے بجٹ کا سالانہ ترقیاتی پروگرام معطل کردیا تھا اور ڈی سی کرک کو ہدایت کی تھی کہ وہ سالانہ ترقیاتی منصوبوں پر تاحکم ثانی عمل درآمد روک دیں حالانکہ لوکل گورنمنٹ کمیشن کے پاس اس قسم کا کوئی اختیار نہیں۔