17-04-2017

پشاور ہائی کورٹ نے عدالتی احکامات کی تعمیل نہ کرنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے وفاقی سیکرٹری داخلہ کی تنخواہ قرق کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں ۔

دائررٹ درخواست میں عدالت کو بتایا گیا کہ درخواست گزار ڈسٹرکٹ آفیسر فرنٹیئر کانسٹیبلری تعینات ہیں اور اسکی دو ہزار بارہ سے گریڈ سترہ سے اٹھارہ میں ترقی بنتی ہے تاہم انہیں نہیں دی جا رہی ہے جبکہ کمانڈنٹ ایف سی نے دو مرتبہ ترقی کا کیس بنا کر وزارت داخلہ کو بھجوایا تاہم وزارت داخلہ اسے واپس کر دیتی ہے جس کے خلاف درخواست گزار نے رٹ پٹیشن دائر کی اور فاضل عدالت نے دو مرتبہ کمنٹس طلب کئے تاہم سیکرٹری داخلہ دو ہزار پندرہ سے اب تک جواب بھی عدالت میں داخل نہیں کر رہے ہیں ۔

اس پر عدالت نے برہمی کااظہار کرتے ہوئے سیکرٹری داخلہ کی تنخواہ قرق کرنے کا حکم دیا اور دائر رٹ پر سماعت ملتوی کردی۔