25-07-2017

سپریم کورٹ نے قتل کے مقدمات میں عمر قید کی سزا پانے والے دو ملزمان کو 15 سال بعد بری کردیا ہے۔

جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ  کے تین بنچ نے قتل کے مقدمات میں عمر قید کی سزا پانے والے دو ملزمان غلام مصطفےٰ اور منصور سکندر کی اپیلیں منظور کرتے ہوئے انہیں مقدمہ سے بری کر دیا ۔غلام مصطفیٰ کو کراچی کے علاقے لانڈھی میں خاتون سمیت دو افراد کو قتل کرنے کے الزام میں سزا سنائی گئی تھی جبکہ منصور سکندر پر 2002 میں فیصل آباد میں ایک شخص کو قتل کرنے کا الزام تھا۔ ٹرائل کورٹس نے ملزمان کو عمرقید کی سزا سنائی جسے ہائی کورٹس نے برقرار رکھا، جس پر ملزمان نے سپریم کورٹ میں اپیلیں دائر کی تھیں۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ مدعی اس طرح کے مقدمات میں جھوٹ کا پلندہ بنالیتے ہیں اور بدقسمتی سے عدالتیں بھی جھوٹی شہادتوں کو تسلیم کرلیتی ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ  لوگ جھوٹی کہانیاں بنا کرکہتے ہیں کہ عدالت نے انصاف نہیں کیا، لیکن کوئی یہ نہیں سوچتا کیا اس نے خود انصاف کیا ہے۔