05-04-2017

پشاور ہائی کورٹ نے پانچ لاپتہ افراد سے متعلق رٹ درخواستوں پر فوکل پرسن سے ان سے متعلق جامع رپورٹ پیش کرنے کے احکامات جاری کر دیئے جبکہ چھ لاپتہ افراد کا انٹرمنٹ سنٹرز میں موجودگی اور ایک کا گھر واپس لوٹ آنے پر ان کی گمشدگی کے خلاف دائر رٹ درخواستیں نمٹا دیں ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اور جسٹس اکرام اللہ خان پر مشتمل دو رکنی بنچ نے لاپتہ افراد سے متعلق درخواستوں کی سماعت کی ۔ دوران سماعت لاپتہ افراد کی درخواستوں کے فوکل پرسن نے عدالت کو بتایا کہ لاپتہ ہونے والے چھ افراد  کوہاٹ ، غلنئی، فضاء گھٹ اور پیتھام انٹرمنٹ سنٹروں میں موجود ہیں جبکہ ایک کو حساس اداروں نے حراست میں لیا تھا جو گھر لوٹ آیا ہے ۔ جس پر فاضل عدالت نے ان کی گمشدگی کے خلاف دائر درخواستیں نمٹا دیئے ۔ عدالت نے پانچ دیگر درخواستوں پر لاپتہ افراد کیسز کے فوکل پرسن سے ان لاپتہ افراد بارے جامع رپورٹ طلب کر کے سماعت اگلی تاریخ تک ملتوی کردی ۔