22-08-2017

سپریم کورٹ نے خیبر پختونخوا کے لیبر کالونیوں میں مقیم مزدوروں کو ان کے مکانات مالکانہ حقوق پر دینے کے عدالتی احکامات معطل کردیئے اور اس حوالے سے لیبر یونین کے عہدیداروں کو نوٹس جاری کردیئے ہیں۔

جسٹس مشیر عالم اور جسٹس فائز عیسی پر مشتمل دو رکنی بنچ نے مختلف صنعت کاروں اور سیکرٹری ورکرز ویلفیئر بورڈ کی جانب سے دائر علیحدہ علیحدہ اپیلوں کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ پیپلز پارٹی کی حکومت نے لیبر کالونیوں میں مقیم مزدوروں کو ان کے رہائشی مکانات مالکانہ حقوق پر دینے کا فیصلہ کیا تھا جس میں متعلقہ صنعتی یونٹس کے مالکان کی رائے شامل نہیں تھی جبکہ ورکرز ویلفیئر بورڈ اور ورکرز ویلفیئر فنڈ دونوں کے پاس ان مکانات کو مالکانہ حقوق پر دینے کا اختیار نہیں تھا۔ سیکرٹری ورکرز ویلفیئر بورڈ کے وکلاء نے عدالت کوبتایا کہ بدقسمتی سے ان کالونیوں میں زیادہ تر ایسے افراد رہائش پذیر ہیں جنہوں نے یہ مکانات مزدوروں سے آگے کرائے پر لے رکھے ہیں ۔