02-05-2017

پشاور ہائی کورٹ نے عدالتی احکامات کے باوجود محکمہ تعلیم کے ریٹائرڈ اہلکار کے بیٹے کو بھرتی نہ کرنے پر سیکرٹری ایجوکیشن اور ڈپٹی ڈائریکٹر ایجوکیشن و ڈی ای او نوشہرہ کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کر لیا ہے ۔

جسٹس وقار احمد سیٹھ  اور جسٹس یونس تہیم پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر توہین عدالت رٹ درخواست  کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایاگیاکہ درخواست گزار کا والد محکمہ تعلیم سے ریٹائرڈ ہوا تھا اور اس نے سن کوٹے کے تحت ملازمت پر بھرتی کےلئے درخواست دی تھی تاہم اس پر عمل درآمد نہ ہونے پر درخواست گزار نے پشاور ہائی کورٹ میں رٹ پٹیشن دائر کی اور عدالت نے رٹ منظور کر لی تاہم اس کے باوجود متعلقہ حکام ان کی درخواست پر عمل درآمد نہیں کر رہے ہیں جو کہ توہین عدالت کے زمرے میں آتا ہے لہذا متعلقہ حکام کے خلاف توہین عدالت کی کاروائی عمل میں لائی جائے ۔