26-10-2017

پشاور ہائی کورٹ نے محکمہ پولیس کے ایک سو چھتیس اسسٹنٹ سب انسپکٹروں کو سب انسپکٹر کی پوسٹ پر پانچ دسمبر تک ترقی نہ دینے کی صورت میں آئی جی پی کے خلاف توہین کی کاروائی شروع کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں۔

جسٹس وقار احمد سیٹھ اور جسٹس غضنفر علی پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر توہین عدالت رٹ درخواست گزار کی سماعت کی جس میں عدالت کوبتایا گیا کہ عدالت عالیہ نے ان کی دائر رٹ منظور کرتے ہوئے درخواست گزاروں کو سب انسپکٹر کی پوسٹ پر ترقی دینے کے احکامات دو ہزار پندرہ کو دیئے تھے لیکن تاحال عدالتی احکامات پر عمل درآمد نہیں کی جا رہی جو توہین عدالت کے زمرے میں آتا ہے لہذا متعلقہ حکام کے خلاف توہین عدالت کی کاروائی عمل میں لائی جائے ۔

فاضل عدالت نے آئی جی پی، ڈی آئی جی ہیڈکوارٹرز اور ڈی آئی جی آپریشن کو پانچ دسمبر تک عدالتی احکامات پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے حکم دیا اور متنبہ کیا کہ بصورت دیگر ان کے خلاف توہین عدالت کی کاروائی عمل میں لائی جائے گی ۔