24-04-2017

سپریم کورٹ نے مردم شماری فارم میں سکھ برادری کا خانہ شامل کرنے کے حوالے سے ادارہ شماریات کی اپیل پر سندھ اور پشاور ہائی کورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دے دیا ہے ۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں قائم سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ نے ادارہ شماریات کی اپیل پر سماعت  کی۔

چیف جسٹس پاکستان  نے ریماکس دئیے کہ مردم شماری کا پہلا مرحلہ مکمل ہو چکا ہے اورملک کے 63 اضلاع میں مردم شماری مکمل ہو چکی ہےاب  نئے فارم کی چھپائی ممکن نہیں۔عدالت نے حکم دیا کہ مشین ریڈ ایبل فارم میں ہاتھ سے خانہ شامل کرنے پر  مشین پڑھ نہیں سکے گی،نادرہ کے پاس تمام اقلیتوں اور کمیونٹی سے متعلق ڈیٹا موجود ہے،عملی طور پر جہاں مردم شماری ہو چکی ہے وہاں دوبارہ ممکن نہیں۔