01-11-2017

پارلیمنٹ میں موجود تمام سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں نے مردم شماری کے نتائج کی روشنی میں اگلے سال ہونے والے عام انتخابات سے پہلے نئی حلقہ بندیاں کروانے پر اتفاق کیا ہے۔

 حکومت اور اپوزیشن جماعتوں کے رہنماوں کے منعقد اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ 2018 میں عام انتخابات نئی حلقہ بندیوں پر ہوں گے تاہم قومی اسمبلی کی موجودہ نشستیں 272 رکھنے پر ہی اتفاق کیا  گیا ہے۔

نئی حلقہ بندیوں کے مطابق آبادی کے لحاظ سے ملک کے سب سے بڑے صوبے پنجاب کی 9 نشستیں کم کر د ی جائیں گی۔ ان میں سے پانچ نشستیں صوبہ خیبر پختونخوا، تین نشستیں صوبہ بلوچستان جبکہ ایک نشست وفاقی دارالحکومت کو مل جائے گی جبکہ صوبہ سندھ کی نشستوں میں کوئی کمی نہیں کی گئی۔

صوبہ خیبر پختونخوا کی جنرل نشستوں کی تعداد 34 ہے ان میں چار نشستوں کا اضافہ ہو گا جبکہ ایک مخصوص نشست بھی بڑھا دی جائے گی۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں عام انتخابات دو نشستوں پر ہوتے ہیں جبکہ اگلے سال اس میں بھی ایک نشست کا اضافہ کیا جائے گا اور یہ تعداد 3 ہو جائے گی۔وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے فاٹا میں قومی اسمبلی کی نشستوں کی تعداد 11 ہے اور اس میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا۔