01-03-2017

پشاور ہائی کورٹ نے صوبے کے میڈیکل کالجز میں مہمند ایجنسی سمیت فاٹا  کے طلباء کےلئے مختص کوٹہ پر دوسرے علاقوں کے طلباء کو داخلہ دینے کے خلاف دائر رٹ پر سیکرٹری سیفران کو تحقیقات کرکے رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں ۔

دائر رٹ درخواست میں عدالت کو بتایا گیا کہ صوبہ کے میڈیکل کالجز میں قبائلی علاقہ جات فاٹا  کے طلباء کےلئے بیس آسامیوں کا کوٹہ مختص کیا گیا ہے تاہم اس مخصوص کوٹہ پر ان طلباء کو داخلہ دیا گیا ہے جن کا ڈومیسال فاٹا کا نہیں اس بناء پر داخلے میرٹ کے خلاف دیئے گئے جو کہ غیر قانونی اور غیر آئینی اقدام ہے ۔

فاضل عدالت نے دائر رٹ پر سیکرٹری  سیفران کو ہدایت کی کہ وہ اس بات کی تصدیق کریں کہ فاٹا کوٹہ پر داخلے میرٹ پر دیئے گئے ہیں ؟