26-05-2017

پشاور ہائی کورٹ نے حیات آباد میں واقع نجی میڈیکل کالج کی طالبات کو کالج  سےبے دخلی کا نوٹی فیکیشن معطل کرتے ہوئے کالج کی انتظامیہ سے جواب طلب کرلیا ہے ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اور جسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر رٹ پٹیشن کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ درخواست گزارہ مسماۃ سارا اور مسماۃ مینرہ دونوں بہنیں حیات آباد میں واقع نجی میڈیکل کالج کی طالبات ہیں تاہم کالج انتظامیہ انہیں گزشتہ تین سالوں سے حجاب اوڑھنے اور مذہبی لگاو کی بناء پر کالعدم تنظیم کے نام پر ہراساں کر رہی ہے اور انہیں کالج سے بے دخلی کا نوٹی فیکیشن جاری کیا گیا ہے جو کہ غیر قانونی اور ان کے ساتھ زیادتی ہے ۔ فاضل عدالت نے نجی میڈیکل کالج کے متعلقہ حکام کو نوٹس جاری کرکے ان سے جواب طلب کر لی اور ان کی بے دخلی کا نوٹی فیکیشن معطل کردیا۔