07-11-2017

احتساب عدالت نے نیب ریفرنسز یکجا کرنے سے متعلق سابق وزیراعظم نوازشریف کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔

 احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے  سابق وزیراعظم نوازشریف،ان کی صاحبزادی مریم نواز  اور داماد کیپٹن ریٹائرڈ محمد صفدر کے خلاف نیب ریفرنسز کی سماعت  ہوئی ۔
دوران سماعت سابق وزیراعظم کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ سابق وزیراعظم نوازشریف کے خلاف تینوں ریفرنسز عبوری ہیں،یہ ریفرنسز ایک ہی جے آئی ٹی کی رپورٹ پر دائر ہوئے اور ان مقدمات کے گواہان بھی مشترکہ ہیں،تینوں ریفرنسزکو ایک ریفرنس  بنا کر فائل کرنا چاہئے ،عدالت ایک ہی فرد جرم عائد کر ے۔خواجہ حارث نے اسلام آباد ہائی کورٹ کا فیصلہ بھی پڑھ کر سنایااورعدالت سے تینوں ریفرنسز کو یکجا کرنے کی استدعا کی۔دوران سماعت عدالت نے ریمارکس دیئے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے سیکشن 17 بی کے تحت درخواست نمٹانے کا حکم دیا ہے اس موقع پر نیب پراسیکیوٹر سردار مظفر نے ریفرنسز یکجا کرنے کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ ایک سے زائدملزمان پرسیکشن 17ڈی کااطلاق نہیں ہوتا،عدالت نے دیکھناہے کہ اس کیس میں 14ڈی کااطلاق ہوتاہے یانہیں؟۔ نیب آرڈیننس کی شق ایک فردسے متعلق ہے جبکہ تمام ریفرنسزمیں ملزمان کے کردارمختلف ہیں۔
احتساب عدالت نے تینوں ریفرنسز یکجا کرنے سے متعلق دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔