24-05-2017

پشاور ہائی کورٹ نے ورکرز ویلفیئر فنڈز اسلام آباد کی جانب سے ورکرز ویلفیئر بورڈ کے بائیس سو اکاون ملازمین کی تنخواہیں ریلیز ہونے اور رمضان سے پہلے اس کی ادائیگی کی یقین دہانی پر  متعلقہ حکام کو حکم دیا ہے کہ ورکرز ویلفیئر بورڈ  کے زیر انتظام چلنے والے ٹیکنکل ایجوکیشن سکول کے ملازمین کو بھی حاضری رپورٹ کے مطابق چودہ ستمبر تک تنخواہیں ادا کئے جائیں ۔

جسٹس قیصر رشید اورجسٹس محمد غضنفر خان پر مشتمل پشاور ہائی کورٹ کے دو رکنی بنچ نے آل پاکستان ورکرز ویلفیئر بورڈ ایمپلائز یونین کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کوبتایا گیا کہ ورکرز ویلفیئر بورڈ کے ملازمین کو گزشتہ ایک سال سے زائد عرصہ سے تنخواہیں ادا نہیں کی گئیں جس کے باعث وہ معاشی طور پر بدحال ہوچکے ہیں اور کئی گھرانوں میں فاقوں کی نوبت آ چکی ہے ۔

دوران سماعت ورکرز ویلفیئر فنڈ کے ڈپٹی ڈائریکٹر لیگل نے عدالت کو بتایا کہ ورکرز ویلفیئر بورڈ کے بائیس سو اکاون ملازمین کی تنخواہوں کا آرڈر جاری ہو گیا ہے جن کو رمضان سے پہلے تنخواہیں ادا کر دی جائے گی ۔