24-03-2017

 پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ٹی بی کا عالمی دن منایا جا رہا ہے۔

وزارت صحت کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ہر سال 420,000 افراد میں ٹی بی کی تشخیص ہوتی ہے ، لوگوں کی غیر معیاری طرز زندگی ، جراثیم سے آلودہ انداز رہائش ، حفظان صحت کے اصولوں کی خلاف ورزی اور محنت و مشقت کی زیادتی ٹی بی کا سبب بنتی ہے ۔

 عالمی ادارہ صحت کے مطابق پاکستان میں ٹی بی کی انفیکشن میں مبتلا مریضوں کی تعداد ایک لاکھ میں 231 ہے ۔ ہر سال چار لاکھ 20 ہزار مریضوں کی ٹی بی کی تشخیص کی جاتی ہے ۔ ٹی بی کی خطرناک قسم ملٹی ڈرگ ریزسٹنس ہے جس کے جراثیم پر عام ادویات کا اثر نہیں ہوتا ، ایسے مریضوں میں پاکستان دنیا میں چوتھے نمبر پر ہے ، ان مریضوں کی تعداد بارہ ہزار ہے جو انتہائی تشویشناک ہے ۔ ماہرین کے مطابق علاج کا تسلسل برقرار نہ رہنے کے باعث یہ مرض خوفناک شکل اختیار کر جاتا ہے جس کا علاج نہ صرف مشکل بلکہ یہ اور کئی لوگوں میں جراثیم منتقل کرنے کا باعث بنتا ہے ۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ ٹی بی کے علاج کا دورانیہ طویل ہے جسے مکمل نہ کرنے کی وجہ سے اس کے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔