06-03-2017

خیبر پختونخوا بار کونسل اور پشاور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی کال پر پشاور سمیت صوبہ بھر میں وکلاء نے شبقدر میں وکلاء پر دہشت گردوں کے حملے اور وکلاء کی ٹارگٹ کلنگ کے خلاف صوبہ بھر میں عدالتی امور کا بائیکاٹ کیا اور وکلاء پشاور ہائی کورٹ سمیت تمام ماتحت عدالتوں میں مقدمات کی پیروی کےلئے احتجاجا پیش نہ ہوئے جس کے باعث سینکڑوں مقدمات کی سماعت نہ ہوسکی ۔

پشاور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے مطابق پشاور ہائی کورٹ اور ڈسٹرکٹ کورٹ سمیت صوبہ بھر کی عدالتوں میں وکلاء نے شبقدر میں سینئر وکیل محمد جان خان گیگیانی پر دہشت گردوں کے حملے اور ٹارگٹ کلنگ کے خلاف آج عدالتی امور کا بائیکاٹ کیا وکلاء نےواقع کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے سیاہ پٹیاں باندھی جبکہ بار رومز پر سیاہ پرچم لہرائے گئے ۔

اس ضمن میں پشاور ہائی کورٹ بار سمیت صوبہ کے ڈسٹرکٹ اور تحصیل بار ایسوسی ایشنوں کے زیر اہتمام احتجاجی جنرل باڈی اجلاس بھی منعقد ہوئے جس میں سینئر قانون دان محمد جان گیگیانی اور ایڈوکیٹ رحم بادشاہ پر دہشت گرد حملے کی مذمت کی گئی اور حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ حملے میں ملوث دہشت گردوں کو فوری طور پر گرفتار کرکے قرار واقع سزا دی جائے ۔

وکلاء تنظیموں نے حکومت سے یہ مطالبہ بھی کیا کہ وکلاء سمیت عدالتی نظام سے منسلک تمام سٹیک ہولڈرز کو تحفظ فراہم کیا جائے۔احتجاجی اور تعزیتی اجلاسوں میں وکلاء نے جاں بحق ہونے والے سینئر وکیل محمد جان گیگیانی ایڈوکیٹ کی مغفرت جبکہ زخمی ہونے والے ایڈوکیٹ رحم بادشاہ کی جلد صحت یابی کےلئے دعا بھی کی گئی ۔