16-02-2017

پشاور ہائی کورٹ نے صوبائی دارالحکومت پشاور میں پنجاب سے آنے والے مضر صحت اور مصنوعی دودھ  کی فروخت کے خلاف دائر رٹ پر چیف سیکرٹری خیبر پختونخوا اور ڈائریکٹر جنرل لائیو سٹاک کو نوٹس جاری کرکے ڈپٹی کمشنر پشاور  کو تئیس فروری کو عدالت طلب کر لیا ہے ۔

جسٹس روح الاآمین خان اور جسٹس لعل جان خٹک پر مشتمل دو رکنی بنچ نے قانون دان محمد خورشید خان کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ پشاور میں چونا، کوکنگ آئل اور گنے کے رس کی آمیزش والے دودھ کی فروخت سرعام جاری ہے جبکہ دودھ سے کریم نکالنے کے بعد دودھ کے پتلے پن کو دور کرنے کے لئے ڈٹرجنٹ پاوڈر ملایا جا رہا ہے ، ڈٹرجنٹ پاوڈر دودھ کو گاڑھا کرتا ہے اور جھاک بھی بناتا ہے لہذا فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ غیر معیاری اور مضرصحت دودھ کی فروخت کا نوٹس لے کرمتعلقہ حکام کو اس کے خلاف کاروائی کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں ۔

عدالت نے ابتدائی دلائل کے بعد چیف سیکرٹری اور ڈی جی لائیو سٹاک کو نوٹس جاری کرکے ڈپٹی کمشنر پشاور کو عدالت طلب کر لیا اور سماعت تئیس فروری تک ملتوی کر دی ۔