10-10-2017

سپریم کورٹ نے پشاور اور چارسدہ سے تعلق رکھنے والے سکل ڈویلپمنٹ کونسل کے سرٹیفیکیٹس کے حامل تیس سے زائد اساتذہ کی دیگر اداروں سے پروفیشنل سرٹیفیکیٹس لے کر تقرری کےلئے دائر درخواست واپس لینے کی بنیاد پر نمٹا دی ۔

جسٹس اعجاز افضل خان کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ نے دائر درخواست کی سماعت کی جس میں موقف اپنایا گیا تھآ کہ پی ٹی سی اور سی ٹی اساتذہ نے اشتہار کے اجراء کے بعد درخواستیں دیتے ہوئے سکل ڈویلپمنٹ کونسل کے پیشہ وارانہ سرٹیفکیٹ جمع کرائے تھے تاہم تقرری کے بعد محکمہ تعلیم نے بتایا کہ سکل ڈویلپمنٹ کونسل کے سرٹیفیکیٹ بطور پروفیشنل سرٹیفکیٹ تسلیم نہیں کئے جا سکتے اس لئے تقرری ختم کر دی جائے گی تاہم اساتذہ نے پشاور ہائی کورٹ سے رجوع کیا تو عدالت نے دوسرے اداروں سے پیشہ وارانہ سرٹیفکیٹس حاصل کرنے کےلئے ایک سال کی مہلت دی تھی۔