16-11-2017

پشاور ہائی کورٹ نے  چونتیس سال کی عمر میں نائب صوبیدار کی ریٹائرمنٹ کے احکامات معطل کرتے ہوئے پولیٹکل انتظامیہ سے جواب طلب کرلیا ہے۔

چیف جسٹس پشاورہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اورجسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بنچ نے درخواست گزار فضل ربی کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ درخواست گزار خیبر خاصہ دار فورس میں نائب صوبیدار تعینات ہے جس کو چونتیس سال کی عمر پوری ہونے پر ریٹائرڈ کیا جا رہا ہے جو کہ غیر قانونی اور غیر آئینی اقدام ہے جبکہ پولیٹکل انتظامیہ کا موقف ہے کہ چونکہ درخواست گزار تین سال تک  بطور نائب صوبیدار رہ چکا ہے لہذا اس بناء پر اس کی ریٹائرمنٹ کی مدت مکمل ہوچکی ہے حالانکہ پشاور ہائی کورٹ  نائب صوبیدار کی تین سال کی مدت مکمل ہونے پر ریٹائرمنٹ کا قانون منسوخ کر چکی ہے لہذا پولیٹکل انتظامیہ کے اس فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے۔