24-01-2017

پشاور ہائی کورٹ نے نیب خیبر پختونخوا کو ڈپٹی ڈائریکٹر واٹر فلٹریشن پلانٹ کی گرفتاری سے روکنے سے متعلق احکامات میں توسیع کرتے ہوئے نیب خیبر پختونخوا سے جواب طلب کرلیاہے۔

جسٹس وقار احمد سیٹھ اورجسٹس محمد غضنفر خان پر مشتمل پشاور ہائی کورٹ کے دو رکنی بنچ نے ڈپٹی ڈائریکٹر واٹر فلٹریشن پلانٹ اصغر خان کی جانب سے دائر رٹ درخواست پر سماعت کی جس میں عدالت کوبتایا گیا کہ وفاقی حکومت نے خیبر پختونخوا کے مختلف اضلاع میں واٹر فلٹریشن کے چھ سو نواسی  پلانٹ لگا رکھے ہیں اور درخواست گزار کو کسی قسم کے مالی اختیارات حاصل نہ تھےتاہم انہیں کال اپ نوٹس جاری کیا گیا ہے اور خدشہ ہے کہ اس کی گرفتاری کا خدشہ ہے۔