26-01-2017

پشاور ہائی کورٹ نے ڈپٹی کمشنر پشاور کو پولٹری فروشوں کے خلاف مشاورتی کمیٹی کے بننے تک کسی بھی قسم کی کاروائی سے روکنے کے احکامات جاری کر دیئے ہیں ۔

چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی اورجسٹس اکرام اللہ خان پر مشتمل دو رکنی بنچ نےمتحدہ پولٹری ایسوسی ایشن  کی جانب سے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کو بتایا گیا کہ ڈی سی پشاور آئے روز پولٹری فروشوں کے خلاف مہنگے داموں مرغی فروخت کرنے پر کاروائی کرکے انہیں جرمانہ کرتے ہیں جو کہ ان کے ساتھ زیادتی کے مترادف ہے ۔

دوران سماعت چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی  آفریدی نے ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل سے استفسار کیا کہ کیا کوئی ایسی کمیٹی موجود ہے جو پولٹری کے ریٹ کا تعین کرے جس پر انہوں نے عدالت کوبتایا کہ ایسی کوئی کمیٹی تاحال موجود نہیں جس پر فاضل عدالت نے ڈی سی پشاور کو پولٹری فروشوں کے خلاف مشاورتی کمیٹی کے بننے تک کسی بھی قسم کی کاروائی سے روکنے کے احکامات جاری کر دیئے ۔