28-02-2017

پشاور ہائی کورٹ  نے قبائلی علاقہ جات میں واقع سلک فیکٹریوں سے بجلی کے بلوں میں سیلز ٹیکس اور انکم ٹیکس  کی ریکوری روکتے ہوئے وفاقی حکومت ، ٹیسکو اور کمشنر ان لینڈ ریونیو کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کر لیا ہے ۔

جسٹس سید افسر شاہ اورجسٹس یونس تہیم پر مشتمل دو رکنی بنچ نے دائر رٹ درخواست کی سماعت کی جس میں عدالت کوبتایا گیاکہ وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقہ جات میں واقع ان سلک فیکٹریوں کو ٹیسکو کی جانب سے جو بجلی بل موصول ہوئے ہیں ان میں انکم ٹیکس اور سیلز ٹیکس بھی شامل ہیں جو کہ قبائلی علاقوں میں نافذ نہیں ہے اور دیگر فاٹا میں قائم صنعتی یونٹوں کے بجلی بلوں میں یہ ٹیکس نہیں آتے اس لئے فاضل عدالت سے استدعا ہے کہ بجلی بلوں میں سیلز ٹیکس  اور انکم ٹیکس  ریکوری کالعدم قرار دی جائے ۔