07-03-2017

خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور میں حال ہی میں بھرتی ہونے والے سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس  کے دوسرے بیچ کا ایک مہینے پر محیط پروبیشن سروس ٹریننگ  پروگرام مکمل ہو گیا ہے جس میں چونتیس سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس نے شرکت کی ۔

پروبیشن سروس ٹریننگ کی اختتامی تقریب خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی پشاور میں منعقد ہوئی جس میں ڈائریکٹر جنرل جوڈیشل اکیڈمی محمدمسعود خان ، سینئر ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن محمد آصف خان ، ڈین فیکلٹی خواجہ وجہہ الدین ، ڈائریکٹر انسٹرکشن حافظ نسیم اکبر اور ڈاکٹر قاضی عطاء اللہ سمیت شرکاء اور اکیڈمی کے دیگر افسران نے شرکت کی ۔

اختتامی تقریب سے اپنے خطاب میں ڈائریکٹر جنرل جوڈیشل اکیڈمی محمد مسعود خان نےپروبیشن سروس ٹریننگ مکمل کرنے پرسول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس کو مبارک باد دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ ایک ماہ پر محیط اس پروبیشن سروس ٹریننگ  سے نہ صرف شرکاء کے پیشہ وارانہ صلاحیتوں میں اضافہ ہوا ہو گا بلکہ اس سے لوگوں کو فوری اور سستے انصاف کی فراہمی میں بھی مددملے گی ۔

 ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی نے کہا کہ خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی نے دو ہزار بارہ سے دو ہزار سولہ کے درمیانی عرصہ میں جوڈیشل افسران اور نظام انصاف سے منسلک تمام سٹیک ہولڈرز کے مختلف ایک سوبتیس ٹریننگز، سیمینارز اور ورک شاپس کے ذریعے تین ہزار پانچ سو ستاسی شرکاء کو ٹریننگ فراہم کی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ موجودہ ٹریننگ پروگرام سے قبل سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس  کے پہلے بنچ  میں چونتیس جوڈیشل افسران کی پروبیشن سروس ٹریننگ مکمل کی جاچکی ہے جبکہ تیسرے بیچ  میں مزید تینتس جوڈیشل افسران شریک ہوں گے  جو تیرہ مارچ سے تیرہ اپریل دو ہزار سترہ تک جاری رہے گا۔ ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی نے کہا کہ چیئرمین خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی ، چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس یحیی آفریدی کی خصوصی ہدایات کی روشنی میں جوڈیشل اکیڈمی مختلف کورسز ڈیزائن کر رہی ہے جن کے تحت صوبہ کے مختلف اضلاع میں تعینات جوڈیشل افسران سمیت نظام انصاف سے منسلک دیگر سٹیک ہولڈرز کےلئے تربیتی پروگرامز منعقد کئے جائیں گے ۔

اختتامی تقریب سے اپنے خطاب میں ڈائریکٹر انسٹرکشن جوڈیشل اکیڈمی حافظ نسیم اکبر نے پروبیشن سروس ٹریننگ پروگرام کے اغراض و مقاصد بیان کرتے ہوئے کہا ٹریننگ دینے والےریسورس پرسنز میں زیادہ تر کا تعلق جوڈیشری سے تھا جبکہ دیگر میں ان افراد کو لیا گیا تھا جو کہ اپنے اپنے فیلڈ میں ماہر جانے جاتے ہیں ۔

شرکاء کی جانب سے کلاس ری پری زنٹیٹو  رئیس آفریدی نے اپنے خیالات کا اظہا ر کرتے ہوئے اس ایک ماہ کی تربیتی پروگرام کو مفید اور قابل تعریف قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس ٹریننگ میں زیادہ فوکس عملی کام پر دیا گیا تھا جو کہ ان کےلئے پیشہ وارانہ زندگی میں مفید اور کارآمد ثابت ہوگا ۔

تقریب کے اختتام پر ڈائریکٹر جنرل جوڈیشل اکیڈمی محمد مسعود خان نے پروبیش سروس ٹریننگ مکمل کرنے والے چونتیس سول ججز کم جوڈیشل مجسٹریٹس میں سرٹیفکیٹس تقسیم کیں جبکہ شرکاء ٹریننگ کی جانب سے ڈی جی جوڈیشل اکیڈمی پشاور کو پینٹنگ بھی پیش کی گئی ۔