28-03-2017

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے قانون و انصاف نے احتساب آرڈ یننس میں ترمیم کا بل ’’نیب ترمیمی بل2017‘‘منظور کر لیا،بل کے تحت نیب ازخود پلی بارگین نہیں کر سکے گی جبکہ نیب عدالتی احکام کے بعد ہی نیب پلی بارگین کر سکے گی،پلی بارگین کرنے والا شخص تاحیات عوامی عہدے اور سرکاری ملازمت کیلئے نااہل ہوگا۔

 کمیٹی نے فوجداری مقدمات میں تاخیر کے حوالے سے ’’عدالتوں میں کیسز کے اخراجات کا بل 2017 بھی منظور کرلیا‘‘ بل کے تحت اگر کسی مقدمہ میں وکیل پیش نہیں ہوتا تو عدالت کی طرف سے متعلقہ فریق کو جرمانہ ہوگا۔ کمیٹی نے اردو کے ساتھ چاروں صوبائی زبانوں کو قومی زبان کا درجہ دینے کے حوالے سے بل کو آئندہ اجلاس تک موخر کردیا۔

قائمہ کمیٹی نے دھماکا خیز مواد کے ترمیمی بل2017 کابھی تفصیلی جائزہ لینے کے بعد منظور کر لیا۔ اسی طرح سینٹ کی  قائمہ کمیٹی نے آئینی ترمیمی بل 2017 کو وزارت تعلیم و تربیت کی موجودگی میں جائزہ لینے کا فیصلہ کیا اور تب تک معاملہ موخر کر دیا۔