12-12-2017

پشاورہائی کورٹ نے شہدائے آرمی پبلک سکول کی یادگارپرخرچ کی جانے والی رقم کی تحقیقات کے حوالے سے دائردرخواست پرحکم امتناعی جاری کرتے ہوئے محکمہ خزانہ کومزیدرقم کی ادائیگی سے روک دیاہے۔

جسٹس اکرام اللہ خان اورجسٹس ا عجازانورپرمشتمل دورکنی بنچ نے دائر ر ٹ درخواست کی سماعت کی۔  رٹ میں عدالت کوبتایا گیا کہ  صوبائی حکومت نے شہداء اے پی ایس کی یادمیں شایان شان یادگاربنانے کا اعلان کیاتھاجس کیلئے محکمہ خزانہ کی جانب سے ایک کروڑ50لاکھ روپے جاری کئے گئے تھے تاہم کئی مہینے گزرنے کے باوجودیادگار تعمیر نہیں کیاگیاتاہم اب جبکہ شہداء اے پی ایس کی برسی قریب آگئی توصوبائی حکومت نے ناقص پلاسٹک کے میٹریل سے ایک یادگارتعمیرکی جس کیلئے میٹریل لاہورسے منگوایا گیا ۔ عدالت سے استدعاکی جاتی ہے کہ اس منصوبے کیلئے مزیدرقم جاری نہ کرنے کے احکامات جاری کرکے لگائی گئی رقم کی تحقیقات کی جائے ۔