01-11-2017

لاہور ہائی کورٹ نے نیب کی جانب سے پنجاب حکومت کی 56 کمپنیوں میں 80 ارب روپے کی مبینہ بے ضابطگیوں کی تحقیقات نہ کرنے کیخلاف درخواست پر نیب، آڈیٹر جنرل پنجاب اور وفاقی حکومت سے جواب 6 نومبر کو جواب طلب کر لیا ہے۔

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے اظہر صدیق ایڈووکیٹ کی درخواست پر سماعت کی جس میں موقف اختیار کیا  گیاکہ پنجاب حکومت نے بلدیاتی نظام کے باوجود 56 کمپنیاں بنا رکھی ہیں، بلدیاتی اداروں کے اختیارات ان کمپنیوں کو دیکر پورے صوبے کو ہی پنجاب پرائیویٹ لمیٹڈ کمپنی بنا دیا گیا ہے، ان کمپنیوں میں 80 ارب روپے کی کرپشن کا انکشاف ہوا مگر نیب نے کوئی کارروائی نہیں کی۔لہذا عدالت نیب کو معاملے تحقیقات کا حکم دے۔