10-04-2018

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار  نے کہا ہے کہ جتنے بھی ازخود نوٹس لیے ان کا مقصد صرف بنیادی حقوق کی فراہمی ہے۔

کوئٹہ میں بلوچستان ہائی کورٹ بار کے عشائیے سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ افسوس سے کہنا پڑتا ہے بلوچستان سے بنیادی حقوق کی کوئی پٹیشن موصول نہیں ہوئی اور جب بنیادی حقوق کےحوالےسے پٹیشن نہ آئے تو سوموٹو لینا پڑتا ہے جبکہ جتنے بھی از خود نوٹس لیے ان کا مقصد صرف بنیادی حقوق کی فراہمی ہے اور میں نہ تو کوئی وضاحت پیش کررہا ہوں اور نہ میڈیا اسے وضاحت کے طور پر پیش کرے۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ یہ میرا گھر ہے میں اپنے گھر آیا ہوں، اپنے بھائیوں میں آیا ہوں، گھرآنے والے کو خوش آمدید نہیں کہا جاتا پیار کیا جاتا ہے جب کہ بلوچستان کے لوگ لاچار نہیں میرے لئے بہت پرعزم ہیں، بلوچستان کے لوگوں کوچاہیے کہ وہ اپنے بچوں کو تعلیم کی طرف راغب کریں اور آپ لوگوں کو تعلیم کے لیے جدوجہد خود کرنی پڑے گی۔جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ عوام کو حقوق دلانے اور فرائض میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کریں گے۔